Tuesday, 10 November 2015

Asemic International (Asemic Manifest III) (ارتہین کھلی سوم)




Tae Ateh Ekaterina Samigulina answering  Tae Ateh Mark Giovenale’s questions on behalf of Asemic International



 1. Because of its ambivalent nature, asemic writing can’t be called neither writing nor visual art in their common meaning; it would be incorrect. However, this attempt to classify asemic writing as a new type of visual poetry can provide an interesting perspective on studying the history of visual practices and reinterpreting this heritage from the asemic point of view. Visual poetry is synthetic; it is a symbiosis of a conventional sign and a picture that also draws on categories of fine art (colour, space, texture, composition, etc.) in relation to this conventional sign (be it a letter, a number or any other recognizable symbol). Symbols in a visual text imply a meaning (though not coherent like in a typical linear composition, but discrete). In visual poetry, signifiers don’t lose their content completely, they "dissolve" it in their compositional unity, thus simultaneously existing in two dimensions – both textual and visual. It is this synthetic nature that makes a work a visual poem. However, this creative principle cannot be entirely referred to asemic writing since the textual dimension is reduced to stylised, ineligible writing that reminds more of painting or drawing. In this regard, an asemic anti-sign is closer to a picture than to a text. If it is a synthesis indeed, it is more complex - a metaphor of ‘a text in itself’ implies the movement of an artist's hand that intends to write, not to paint – to write in absence of any designated code apart from emotionally induced characteristics of a line (its pressure, colour, thickness etc.). Asemic writing attempts to view the text as visual art and also, more importantly, view the language as an image capable of transferring meaning without actual linguistic means involved. In other words, asemic writing is a signless artistic interpretation of the language (either the language itself or the language as handwriting or font), creating an image of that language. In the traditional literature, we constantly see images of various language groups, classes, communities, etc. We see images created by writers in accordance with their vision of these linguistic elements. In fact, the same thing happens in asemic writing. We can find some kind of a parallel between it [asemic writing] and literature: just as a writer uses "the dictionary of the day" and creates a condensed image of this dictionary, an asemic artist unconsciously reproduces handwriting or a font tradition of the language he imitates. But at the same time the asemic artist goes further than the writer. If, for example, Li Bai’s brilliant poems restore the flavour of the Chinese language in the 8th century BC, Hu Bing's "Book of Heaven" unfolds the metaphor of the Chinese language in general not only in terms of institutionalized writing but also in terms of the nature of writing, its distinctive features. "The Book of Heaven" can be recognized as Chinese by any person on the planet, just as the writings of Jean-Christophe Giagottino can be easily referred to books in the Arabic languages. Back to visual poetry, creating the image of a language is almost never a goal in itself. More than this, visual artists have been increasingly using contemporary technologies (let alone the Baroque) and - like many Dadaists, Constructivists etc. – worked with typefaces (today it could be digitally manipulated fonts) that were actually international, bare signs. Not the character of a single sign but the compositional semantic location of all characters used on the worksheet is the most important thing in visual poetry. Rudeness and constructiveness of the font developed in the cellars of INKhUK (Institute of Artistic Culture), displays a certain perception of the Russian language in the revolutionary times: Russian as the language of the proletariat (which relates it to today’s asemic writing). It’s also characteristic that visual poetry has never aimed at creating a new (‘non-bourgeious’ in the Russian interpretation in the 1910-1930s) language. The "avant-garde" view of the Russian language is not an image of the Russian language at all. To sum it up, it is a kind of logical impasse. On the one hand, asemic writing cannot be attributed to visual poetry because of its non-synthetic nature. On the other hand, the use of visual art elements leads to the creation of an image (it should impel us to relate asemic writing to the field of art); but it is not just a mere image, it is the image of a language. And this fact immediately takes us out of the field of visual art and instantly refocuses on literature. We can make only one conclusion: asemic writing is a border zone (but not a "synthetic" one) between writing and painting; it is a transitional phenomenon, which will never have its transition complete. We suggest securing the proper term "asemic writing" for a new kind of art that has no analogues and cannot be included in any of the existing classifications. Asemic writing is neither visual poetry, nor painting. Asemic writing is asemic writing only. 2. There is one omnipresent but rarely articulated principle in art ethics: anything can be called something only after designating itself. It also has to specify the conditions of being eligible to be called so in the future. That's why we find it incorrect to include the numerous experiments of the 20th century in the asemic area. We can call it the first steps of asemic art, but not the asemic art itself yet. It laid the ground for the philosophical base. Obviously, asemic writing grew out of poetics and aesthetics of the Russian and European twentieth-century avant-garde. It was a crisis time in our history, the era of fin de siècle, when developing a new language of art and setting new objectives was very relevant: the world changed, the new "maker" - the proletariat - appeared in the arena of politics and culture who demanded the new world, the new art not associated with the mystical revelations of the past. The early 21st century appears to us as a kind of a (sad) parody of the beginning of the 20th century: there are no revolutions to expect, the world is immersed into a post-modern anarchy, art is commanded by the archetype of the game (of the capitalist game to be more exact), the proletariat returned to the pit latrines and is cut off from art, everything is ruled by the cultural or money elite, or rather monetary and cultural, for the one who pays for dinner decides it all. In this situation, the art world desperately needed a new sincerity, which is premised on a genuine international and, as we see, class basis. The initial experience of the avant-garde has been closely associated with the movement of the masses and it seems to us that asemic writing adopted this particular line of avant-garde aesthetics and ethics in many ways. Collegiality (whether it's "we" of the Russian Cubo-Futurism or "collective unconscious" in the Surrealism and Transition) plays a huge role in the spirit of asemic anti-sign. The image of the language (that's how we see the asemic art basis) suggests an appeal to certain "common" knowledge, the unalienated and the unalienable experience, an appeal not to the consciousness of the structuring power discourse, but to the emotional, human - and humane - nature of language as the universal code of communication between the oppressed. While contemporary art is subject to elitism and philosophizing, it cannot satisfy the "average citizen" and therefore cannot create space that could avoid totalitarianism of consumptive relations. It is well known that the creation of a new world always starts with an utopic idea, with the construction of an illusion of freedom from the existing rules and practices, the illusion based on the idea ‘in the air’ (and therefore belonging to many) expressed by an artist / writer / philosopher. Asemic writing is far from creating such illusions, but its means of expression suggest the idea of universality: it talks lingua generalis to the viewer / reader, speaks a "language" without code complexity; expresses not the idea but rather the immediate emotion. The emotional platform actualizes itself visually in the form of a (certain) language, it combines a variety of asemic experiments carried out by artists from different countries. However, it seems to be quite problematic to talk about asemic writing as a movement. It is problematic in terms of the history of its origins. While breaking into many separate movements, avant-garde could manifest openly (supported with theory) their "separateness" and fix one or another program in the same document. In the asemic environment, we face a "theoretical silence": except for interviews and articles by asemic writing founders Michael Jacobson and Tim Gaze we see no policy provisions or communities on the basis of "kinship". The Facebook group gives fragmented series of experiments, part of which is even not directly related to asemic writing. We are trying to overcome the barrier formed by private asemic practices by creating the International Asemic Association, writing manifestos and theoretical articles, but the reaction of participants in a virtual community is quite low. In terms of aesthetics / ethics as a sum of theoretical positions, asemic writing has not been completely formed yet, but in terms of poetics as a set of tools to create asemic work, we can talk about its existence. We assume that in the foreseeable future the level of reflection (including researchers) on the existence of asemic writing will increase significantly, and only then we will be able to talk fundamentally about developing operational concepts and analysing the types of asemic writing. Asemic writing as an artistic practice has gone beyond the boundaries of avant-garde, where it can be found in a few experiments only; but without the practice of self-reflection it can remain in the history of art just as a branch of visual poetry, which seems to us not the best option or even a completely wrong option from the terminological point of view. Asemic workers of all countries, unite! We want to get away from the postmodern layers of meanings into the asemia of the class, into the international alliance of the new post-literate in the name of sensual unity and dis-alienation of souls. 3. We have answered this question in the previous one quite extensively, but we can emphasize once again: individual flashes of asemic demonstration without manifesting actual ideas often look like a postmodern game, an offshoot of the abstract painting (in the group “Asemic Writing: The New Post-Literate” an abstract painting often passes for asemic writing, what indicates the absence of a clear aesthetic program); and it makes us think of creating a theoretical asemic team that could elaborate the general principles to unite us as a movement. Possibly, there will be different movements to come with their unique explanations of what the asemic art is. But all these movements do not exist yet, and all the void signifiers now belong to the researchers. We have to choose: either to accept that label attributed to the movement, or to create it ourselves – not as a label on a body in a morgue, but as a flag of the New. We urge asemic workers of all countries to unite and go away from all the others! 4. We think there must be a clear distinction of asemic writing from both visual poetry and abstract painting because of their completely different nature. While answering the first question, we have identified these boundaries. In short, at the first glance asemic writing with its graphic anti-signs and fine art elements (color, texture, composition, etc.) relates to visual poetry. However, it is based on "elementary colors and shapes" as applied not to conventional graphic characters, but to pure handwriting, to the image of a language that imitates writing with its artistic lines. Graphology becomes, in fact, the most appropriate tool for analyzing the meaning of an asemic work; besides, its formal characteristics are the sole (and only visually perceptible) content in the anti-sign, and that content may be interpreted as the sum of individual semantics of the elements (color, line, etc.). The nature of this content does not allow to include asemic writing in the domain of literature because of the means of its creation. While the thing we call 'text' creates images using linguistic resources, asemic writing does not use the language but only the means of visual expression in its pure form. This argument could induce us to classify asemic writing as a new type of non-objective painting, except there is one objection. While abstract painting resorted to basic colors, shapes, lines does not refer to a specific sign system, asemic writing pointedly imitates language, thus creating, besides the emotive content-image, the image of the language itself. This feature is inherent in all the contemporary asemic works but with one distinctive feature. The national context in which the author lives while creating the work, or the national context that he or she wants to emphasize affects the inscribed anti-signs. Each anti-sign and the work in general acquires the features of a particular language that the author mimics, and in this case we can talk about creating a quasi-language, i.e. the image of the language, easily recognizable literally "without words". Moreover, it underlines another fundamental difference between abstract painting and asemic writing: the author of the asemic "text" appears in the form of "human writing" rather than "human drawing", i.e. the main criterion for classifying asemic writing as a textual one is the intention of such writing. In other words, both the actor and the content of any asemic work is primarily this or that national (or pre-national, "common") language expressed in pure handwriting - the language dissolving into abstractness but not turning in an abstraction like in non-objective art. Other semiotic layers (the color of anti-signs or their background, or the location of pure colors and forms) are only extra ways to express the artistic intention and the author’s attitude to the subject. In this case, it is sensible to say that the anti-sign in an asemic work plays the same leading role as the word / letter in a traditional visual poem - it becomes the spine and the axis for other elements. However, the nature of anti-sign (its "anti-signness" in fact) destroys the thesis about the synthetic nature of asemic writing, which distinguishes it from visual poetry. The term asemia that gave its name to this artistic direction (which we consider to be entirely separate and new) - does not involve the use of conventional two-component (signifier, signified) anti-signs, so bringing elements of the existing sign systems in asemic writing, or attributing abstract works with such elements to asemic art seems to us fundamentally incorrect. Creating an image of the language and transmitting certain emotional messages (or the author’s unconsciousness, or collective unconsciousness speaking through it) with quasi-linguistic "signs" distinguishes asemic writing both from visual poetry, the latter working primarily with a meaning (even a discrete one), and from abstract art working with the semiotics of color, etc., as well as from the traditional literature, even if it creates an image of the language, but it does so using a fundamentally different (linguistic) means. As for the synthesis, the asemic writing potential to mix with other arts is great and even inexhaustible (it is not exhausted, at least so far). Due to its anti-signness, asemic writing can be used, unfortunately, in many contexts, from absolutely parasitic-elitist to effectively precarious. There is a rich political potential in the asemic art. On the one hand, it can become the practice of "withdrawal" from the world of commodity exchange and into the wild; on the other hand it is a provocative and unstable element in the system brought to order by the totalitarian linguistic discourse. We really do not want asemic writing to become a way of making money or acquiring of a social status just because being an asemic artist may be "fashionable". We do not want to see the devils of the scientific postmodernism who are quick to invent meanings where there are none turning their heads to asemic writing. The content of asemic writing is meaningless, period. It is void as a signifier that failed to make its way to its signified. But it is not meaningless as an act, as a gesture, as the hand of the original language stretched into the interior of an impersonal text, which unites the silent us in the name of a different speech. (ارتہین کھلی سوم) 1. کیونکہ اس مبہم نوعیت کے، ارتہین تحریری اپنے مشترکہ معنی میں نہ لکھنے اور بصری آرٹ نہیں کہا جا سکتا ہے؛ یہ غلط ہو گا. بصری شاعری کی ایک نئی قسم بصری طریقوں کی تاریخ کا مطالعہ کرنے اور نقطہ نظر کے نقطہ نظر سے اس ورثے ارتہین تشریح پر ایک دلچسپ نقطہ نظر فراہم کر سکتے ہیں کے طور پر تاہم، یہ کوشش ارتہین لکھنے کی درجہ بندی کرنے. بصری شاعری مصنوعی ہے؛ یہ ایک روایتی علامت ہے اور یہ بھی اس روایتی نشانی کے سلسلے میں فائن آرٹ (رنگ، ​​جگہ، ساخت، ساخت، وغیرہ) کی اقسام پر مبنی ہے کہ ایک تصویر کا ایک symbiosis ہے (یہ ایک خط، ایک بڑی تعداد یا کسی بھی دوسرے سے پہچانا علامت ہو ). ایک بصری متن میں علامات ایک معنی (اگرچہ ایک عام لکیری ساخت کی طرح مربوط، لیکن مجرد نہیں) کا مطلب. بصری شاعری میں، signifiers مکمل، وہ اس طرح ایک ہی وقت میں دو جہتوں میں موجودہ، ان اجزاء اتحاد میں "تحلیل" ان کے مواد سے محروم نہیں - متنی اور بصری دونوں. یہ سارے کام ایک ہی بصری نظم ہے کہ یہ مصنوعی فطرت ہے. متنی کے طول و عرض پینٹنگ یا ڈرائنگ کی زیادہ یاد دلاتا ہے کہ سٹیلئزیڈ، نااہل لکھنے کے لئے کم ہے تاہم، چونکہ اس تخلیقی اصول مکمل طور پر تحریری طور پر کہا جاتا ہے ارتہین نہیں کیا جا سکتا. اس سلسلے میں، ایک ارتہین مخالف نشانی ایک متن کے مقابلے میں ایک تصویر کے قریب ہے. یہ واقعی ایک ترکیب ہے، تو یہ زیادہ پیچیدہ ہے - جذباتی حوصلہ افزائی خصوصیات کے علاوہ کسی بھی نامزد کوڈ کی غیر موجودگی میں لکھنے کے لئے - 'خود میں ایک متن کی ایک استعارہ نہیں پینٹ کرنے کے لئے، لکھنے کے لئے ارادہ رکھتی ہے کہ ایک فنکار کے ہاتھ کی نقل و حرکت کا مطلب ایک لائن (اس کے دباؤ، رنگ، موٹائی وغیرہ). ارتہین لکھنے اور بھی زیادہ اہم بات یہ ہے، ملوث اصل لسانی مطلب کے بغیر معنی کی منتقلی کے قابل ایک تصویر کے طور پر زبان دیکھنے بصری آرٹ کے طور پر متن کو دیکھنے کے لئے کی کوشش. دوسرے الفاظ میں، ارتہین تحریر اس زبان کی ایک تصویر بنانے، زبان (زبان خود یا لکھاوٹ یا فونٹ کے طور پر زبان) کا signless فنکارانہ تشریح ہے. روایتی ادب میں، ہم مسلسل ہم ان لسانی عناصر کے ان کے نقطہ نظر کے مطابق میں لکھنے والوں کی طرف سے پیدا تصاویر دیکھ وغیرہ مختلف زبان گروپوں، کلاس، کمیونٹیز، کی تصاویر دیکھ سکیں. اصل میں، ایک ہی بات ارتہین تحریری طور پر ہوتا ہے. ہم نے اسے [ارتہین لکھنے اور ادب کے درمیان ایک متوازی کچھ قسم کی تلاش کر سکتے ہیں: ایک مصنف "دن کی ڈکشنری" استعمال کرتا ہے اور اس لغت کے ایک گاڑھا تصویر تخلیق کرتا ہے بالکل اسی طرح جیسے، ایک ارتہین آرٹسٹ نادانستہ لکھاوٹ یا ایک فونٹ روایت اعادہ زبان وہ مشابہت. لیکن ایک ہی وقت میں ارتہین آرٹسٹ مصنف سے آگے جاتا ہے. ، مثال کے طور پر، لی بائی کی شاندار نظمیں 8th صدی قبل مسیح میں چینی زبان کا ذائقہ اگر بحال، ہوجن بنگ "جنت کی کتاب" نہ صرف ادارے لکھنے کے لحاظ سے بلکہ کی شرائط میں عام طور پر چینی زبان کا استعارہ unfolds کے تحریر کی نوعیت، اس کے مخصوص خصوصیات. "جنت کی کتاب" جین کرسٹوف Giagottino کی تحریروں آسانی عربی زبانوں میں ان کتابوں پر کہا جا سکتا ہے کے طور پر، سیارے پر کسی بھی شخص کی طرف سے چینی کے طور پر تسلیم کیا جا سکتا. پیچھے اگلا، دوسرا بصری شاعری، ایک زبان کی تصویر بنانے میں ہی تقریبا کبھی نہیں ایک مقصد ہے. وغیرہ بہت Dadaists، Constructivists طرح - - اس سے زیادہ، بصری فنکاروں تیزی (اکیلے میں Baroque دو) اور عصر حاضر کی ٹیکنالوجی کا استعمال کرتے ہوئے کیا گیا ہے (آج یہ ڈیجیٹل فونٹ ہیرا پھیری جا سکتا ہے) اصل میں بین الاقوامی، ننگی نشانیاں تھے کہ typefaces کے ساتھ کام کیا. ایک سنگل سائن کے کردار لیکن قرطاس پر استعمال کیا تمام حروف کے اجزاء لسانی مقام بصری شاعری میں سب سے زیادہ اہم بات یہ ہے. (آج کے ارتہین لکھنے کے لئے اس سے متعلق ہے) پرولتاریہ کی زبان کے طور پر روسی: INKhUK (فنی ثقافت کے انسٹی ٹیوٹ) کی cellars میں تیار فونٹ کا اسبیتا اور constructiveness، انقلابی دور میں روسی زبان کی ایک مقررہ خیال دکھاتا ہے. یہ بصری شاعری زبان (1910-1930s میں روسی تشریح میں 'غیر bourgeious') ایک نئے پیدا کرنے کے مقصد سے کبھی نہیں ہے کہ بھی خصوصیت ہے. روسی زبان کی "avant garde کے" نقطہ نظر بالکل روسی زبان کی ایک تصویر نہیں ہے. یہ خلاصہ، یہ منطقی تعطل کی ایک قسم ہے. ایک ہاتھ پر، ارتہین تحریر کی وجہ سے اس غیر مصنوعی نوعیت کی بصری شاعری کی طرف منسوب نہیں کیا جا سکتا. دوسری جانب، بصری آرٹ عناصر کے استعمال ایک تصویر کی تخلیق کی طرف جاتا ہے (یہ آرٹ کے میدان میں ارتہین تحریری منسلک کرنے کے لئے ہمارے impel چاہئے)؛ لیکن یہ ایک زبان کی تصویر ہے، صرف ایک صرف تصویر نہیں ہے. اور اس حقیقت کو فوری طور پر بصری آرٹ کے میدان سے باہر لے جاتا ہے اور فوری طور پر ادب پر ​​refocuses. ارتہین تحریری طور پر ایک سرحدی علاقے ہے (نہیں بلکہ ایک "مصنوعی") تحریر اور پینٹنگ کے درمیان؛ ہم صرف ایک نتیجہ بنانے کے کر سکتے ہیں اس منتقلی مکمل کبھی نہیں کرے گا جس میں ایک عبوری رجحان، ہے. ہم نے کوئی اینالاگز ہے اور موجودہ درجہ بندی میں سے کسی میں بھی شامل نہیں کیا جا سکتا ہے کہ آرٹ کی ایک نئی قسم کے لئے مناسب اصطلاح "ارتہین تحریری" کو محفوظ بنانے کا مشورہ دیتے ہیں. ارتہین لکھنے بصری شاعری، نہ پینٹنگ نہ ہے. ارتہین تحریری طور پر صرف لکھنے ارتہین ہے. 2. آرٹ اخلاقیات میں ایک سروویاپی لیکن شاید ہی کبھی ظاہر اصول ہے: کچھ بھی صرف خود نامزد بعد کچھ کہا جا سکتا ہے. یہ بھی مستقبل میں ایسا کہا جا کرنے کے لئے اہل ہونے کے شرائط کی وضاحت کرنے کے لئے ہے. ہم اسے غلط ارتہین علاقے میں 20th صدی کے متعدد تجربات شامل کرنے کے لئے مل جائے یہی وجہ ہے کہ. ہم اس ارتہین آرٹ کا پہلا قدم کہتے ہیں، لیکن نہیں ارتہین آرٹ خود ابھی تک کر سکتے ہیں. یہ فلسفیانہ بنیاد کے لئے زمین رکھی. ظاہر ہے، ارتہین لکھنے poetics اور روسی اور یورپی بیسویں صدی avant garde کے جمالیات کے باہر اضافہ ہوا. پرولتاریہ - - دنیا، تبدیل کر دیا گیا نئے "میکر" سیاست کے میدان میں شائع: یہ ہماری تاریخ میں ایک بحران کا وقت تھا، فن ڈی siècle کے دور، آرٹ کی ایک نئی زبان کی ترقی اور نئے مقاصد کی ترتیب جب بہت متعلقہ تھا اور نئی دنیا کا مطالبہ کیا جو ثقافت، نئی آرٹ ماضی کی صوفیانہ آیتوں کے ساتھ منسلک نہیں. ابتدائی 21st صدی 20th صدی کے آغاز کی ایک (دکھ) بڑوآ کی ایک قسم کے طور پر ہم سے ظاہر ہوتا ہے: وہاں کی توقع کرنے کے لئے کوئی انقلابات، دنیا ایک کے بعد جدید انتشار میں ڈوبی ہے، آرٹ کے ایک archetype کی طرف سے حکم ہے کھیل (سرمایہ دارانہ کھیل سے زیادہ عین مطابق ہونا)، پرولتاریہ گڑھے شوچالی میں واپس آئے اور فن سے کاٹ رہا ہے، سب کچھ کھانے کا فیصلہ کے لئے ادائیگی کرتا ہے جو ایک کے لئے، بلکہ مانیٹری اور ثقافتی یا، ثقافتی یا پیسے اشرافیہ کی طرف سے مسترد کر دیا ہے یہ سب. اس صورت میں، آرٹ کی دنیا شدت جیسا کہ ہم دیکھتے، ایک حقیقی بین الاقوامی پر مبنی ہے جس میں ایک نئی اخلاص،، طبقاتی بنیادوں کی ضرورت. avant garde کے ابتدائی تجربے قریب عوام کی تحریک کے ساتھ منسلک کر دیا گیا ہے اور یہ ارتہین لکھنے کئی طریقوں میں avant garde کے جمالیات اور اخلاقیات کے اس مخصوص لائن اپنایا ہے کہ ہمیں لگتا ہے. collegiality کی (یہ ہے کہ آیا "ہم" روسی Cubo-Futurism کی یا surrealism کے اور منتقلی میں "اجتماعی بیہوش" کے) ارتہین مخالف نشان کی روح میں ایک بہت بڑا کردار ادا کرتا ہے. زبان کی تصویر (ہم ارتہین آرٹ بنیاد دیکھیں کہ کس طرح ہے) بعض "عام" علم، unalienated اور unalienable تجربہ، نہیں structuring کے طاقت گفتگو کے شعور سے اپیل کرنے کے لئے ایک اپیل سے پتہ چلتا ہے، لیکن جذباتی، انسان - اور انسانی - مظلوم کے درمیان بات چیت کے عالمگیر کوڈ کے طور پر زبان کی نوعیت. عصر حاضر کے آرٹ اور elitism کے philosophizing کے ساتھ مشروط ہے، یہ consumptive تعلقات کی مطلق العنانیت سے بچنے کر سکتے اس جگہ نہیں بنا سکتے اس لئے "اوسط شہری" کو پورا نہیں کر سکتے ہیں. یہ اچھی طرح سے ایک نئی دنیا کی تخلیق ہمیشہ 'ہوا میں' خیال کی بنیاد پر، موجودہ قوانین اور طریقوں سے آزادی کا ایک برم کی تعمیر کے ساتھ، ایک utopic خیال کے ساتھ برم شروع ہوتا ہے پر جانا جاتا ہے (اور اس وجہ سے بہت سے تعلق رکھنے والے ہے ) ایک کلاکار / مصنف / فلسفی کی طرف سے ظاہر. ارتہین لکھنے تک اس طرح کے برم پیدا کرنے کی طرف سے ہے، لیکن اظہار رائے کی اس کا مطلب عمومیت کا خیال مشورہ: یہ ناظرین / پڑھنے کے لئے زبان جنرل بات چیت، کوڈ پیچیدگی کے بغیر ایک "زبان" بولتا ہے؛ نہیں خیال بلکہ فوری طور پر جذبات کا اظہار. جذباتی پلیٹ فارم (بعض) زبان کی شکل میں ضعف خود actualizes، یہ مختلف ممالک سے فنکاروں کی طرف سے کئے ارتہین تجربات کی ایک قسم کو اکٹھا. تاہم، یہ ایک تحریک کے طور پر ارتہین لکھنے کے بارے میں بات کرنے کے لئے بہت مشکلات ہو رہا ہے. یہ اس کی اصل کی تاریخ کے لحاظ سے مسئلہ ہے. بہت سے الگ الگ تحریکوں میں توڑ جبکہ، avant garde کے اپنے "علیحدگی" (اصول کے ساتھ کی حمایت کی) کھلم کھلا صریح اور ایک یا اسی دستاویز میں ایک پروگرام کو ٹھیک کر سکتے. مائیکل جیکبسن اور ٹم Gaze کی ہم "صلہ" کی بنیاد پر کوئی پالیسی دفعات یا کمیونٹیز دیکھیں ارتہین لکھنے بانیوں کی طرف سے انٹرویو اور مضامین کے لئے سوائے ارتہین ماحول میں، ہم نے ایک "نظریاتی خاموشی" کا سامنا. فیس بک گروپ بھی براہ راست تحریری طور پر ارتہین سے متعلق نہیں ہے جن میں سے حصہ تجربات، کی بکھری سیریز دیتا. ہم منشور اور نظریاتی مضامین لکھنے، انٹرنیشنل ارتہین ایسوسی ایشن بنانے کی طرف سے نجی ارتہین طریقوں کی طرف سے قائم رکاوٹ پر قابو پانے کی کوشش کر رہے، لیکن ایک مجازی کمیونٹی میں شرکاء کی رائے بہت کم ہے. نظریاتی عہدوں کی رقم کے طور پر جمالیات / اخلاقیات کے لحاظ سے، مکمل طور پر تحریری طور پر ارتہین ابھی تک قائم نہیں کیا گیا ہے، لیکن ارتہین کام بنانے کے لئے آلات کا ایک سیٹ کے طور پر poetics کے لحاظ سے، ہم اس کے وجود کے بارے میں بات کر سکتے ہیں. ہم مستقبل قریب میں ارتہین لکھنے کے وجود پر عکاسی کی سطح (بشمول محققین) نمایاں طور پر اضافہ ہو جائے گا کہ فرض، اور صرف اس صورت ہم آپریشنل تصورات کی ترقی اور ارتہین تحریر کی اقسام کا تجزیہ کرنے کے بارے میں بنیادی طور پر بات کرنے کے قابل ہو جائے گا. ایک فنکارانہ پریکٹس یہ صرف چند تجربات میں پایا جا سکتا ہے جہاں avant garde کے، کی حدود سے باہر چلا گیا لکھنے ارتہین؛ لیکن خود عکاسی کی مشق کے بغیر یہ صرف ہمارے لئے سب سے بہترین آپشن یا نقطہ نظر کے نقطہ نظر سے اصطلاحات بھی ایک مکمل طور پر غلط آپشن ہے جس بصری شاعری کی ایک شاخ کے طور پر آرٹ کی تاریخ میں رہ سکتے ہیں. تمام ممالک کے ارتہین کارکنوں، متحد! ہم جنسی اتحاد اور روح کے مسترد وحشت کے نام پر نئی پوسٹ تعلیم کے بین الاقوامی اتحاد میں، کلاس کے asemia میں دور معانی کی ما بعد جدیدیت تہوں سے حاصل کرنا چاہتے ہیں. 3. ہم بہت بڑے پیمانے پر گزشتہ ایک میں اس سوال کا جواب ہے، لیکن ہم ایک بار پھر پر زور دیتے ہیں کر سکتے ہیں: ارتہین مظاہرے کی انفرادی چمک اصل خیالات ظاہر کے بغیر اکثر ارتہین تحریر "گروپ میں ایک postmodern کھیل، تجریدی مصوری کی ایک شاخ (جیسے نظر آتے ہیں: ایک واضح جمالیاتی پروگرام کی غیر موجودگی کی طرف اشارہ کیا نئی پوسٹ خواندہ "اکثر ارتہین لکھنے کے لئے گزر جاتا ہے ایک تجریدی مصوری،)؛ اور یہ ہمیں ایک تحریک کے طور پر ہمیں متحد کرنے کے لئے عام اصول کی وضاحت کر سکتے ہیں کہ ایک نظریاتی ارتہین ٹیم کی تشکیل کے بارے میں سوچنا ہے. ممکنہ طور پر، ارتہین فن ہے جو ان کی منفرد وضاحت کے ساتھ آنے کے لئے مختلف تحریکوں ہو جائے گا. لیکن ان تمام تحریکوں ابھی تک موجود نہیں ہے، اور تمام باطل signifiers اب محققین سے تعلق رکھتے ہیں. ہم منتخب کرنے کے لئے ہے: یا تو تحریک کی طرف منسوب اس لیبل کو قبول کرنے، یا یہ خود پیدا کرنے کے لئے نہیں - ایک مردہ خانے میں ایک جسم پر لیبل، لیکن نئے کے ایک پرچم کے طور پر کے طور پر. ہم متحد اور تمام دوسروں سے دور جانے کے لئے تمام ممالک کے ارتہین کارکنوں درخواست کرتا ہوں! 4. ہم نے ان کی مکمل طور پر مختلف نوعیت کی بصری شاعری اور تجریدی مصوری دونوں سے ارتہین تحریر کی وجہ سے ایک واضح فرق ہونا چاہیے. پہلے سوال کے جواب میں، ہم نے ان حدود کی نشاندہی کی ہے. مختصر میں، اس کے گرافک مخالف نشانیاں اور فائن آرٹ عناصر (رنگ، ​​ساخت، ساخت، وغیرہ) کے ساتھ تحریری طور پر ارتہین پہلی نظر میں بصری شاعری سے متعلق. تاہم، یہ اس کی فنکارانہ لائنوں کے ساتھ تحریری طور پر مشابہت ہے کہ ایک زبان کی تصویر، روایتی گرافک حروف، لیکن خالص لکھاوٹ نہیں لاگو کے طور پر "پرائمری رنگوں اور سائز" پر مبنی ہے. لپی سائنس، بن جاتا ہے حقیقت میں، ایک ارتہین کام کے معنی تجزیہ کرنے کے لئے سب سے زیادہ مناسب آلے؛ اس کے علاوہ، اس کی رسمی خصوصیات مخالف نشانی میں واحد (اور صرف ضعف محسوس) مواد ہیں، اور اس مواد انفرادی عناصر کے semantics کے (رنگ، ​​لائن، وغیرہ) کی رقم کے طور پر تشریح کی جا سکتی ہے. اس مواد کی نوعیت کی وجہ سے اس کی تخلیق کے اسباب کے ادب کے ڈومین میں ارتہین تحریری شامل کرنے کے لئے کی اجازت نہیں ہے. ہم 'متن' کہتے ہیں بات لسانی وسائل استعمال کرتے ہوئے تصاویر تخلیق کرتے ہیں، ارتہین تحریری زبان لیکن اپنی خالص شکل میں بصری اظہار کا واحد ذریعہ کا استعمال نہیں کرتا. ایک حرج نہیں ہے سوائے اس دلیل، غیر معروضی پینٹنگ کی ایک نئی قسم کے طور پر تحریری طور پر کی درجہ بندی کرنے کے لئے ہمیں ارتہین دلانا کر سکتے ہیں. تجریدی مصوری بنیادی رنگوں کا سہارا جبکہ، سائز، لائنوں ایک مخصوص نشان نظام سے رجوع نہیں کرتا، ارتہین تحریر واضح اس طرح جذباتی مواد تصویر کے علاوہ، پیدا کرنے، زبان سے مشابہت، زبان خود کی تصویر. یہ خصوصیت تمام معاصر ارتہین کاموں میں موروثی لیکن ایک مخصوص خصوصیت کے ساتھ ہے. کام پیدا کرتے ہوئے مصنف رہتا ہے جس میں قومی تناظر، یا وہ پر زور دینا چاہتا ہے کہ قومی تناظر لکھا مخالف علامات کو متاثر کرتا ہے. ہر مخالف نشانی اور عام طور پر کام مصنف کا بہروپ دھارتا ہے، اور اس معاملے میں ہم "الفاظ کے بغیر" لفظی، زبان کی تصویر یعنی، ایک ارد زبان بنانے کے بارے میں آسانی سے پہچانا بات کر سکتے ہیں کسی خاص زبان کی خصوصیات حاصل. اس کے علاوہ، یہ تجریدی مصوری اور ارتہین لکھنے کے درمیان ایک بنیادی فرق واضح: ارتہین "متن" کے مصنف ایک متنی ایک کے طور پر تحریری طور پر درجہ بندی ارتہین لئے اہم معیار یعنی، بلکہ "انسانی ڈرائنگ" کے مقابلے میں "انسانی تحریر" کی شکل میں ظاہر ہوتا ہے اس طرح کے لکھنے کا ارادہ ہے. دوسرے الفاظ میں، اداکار اور کسی بھی ارتہین کام کے مواد دونوں بنیادی طور پر ہے یہ یا کہ قومی (یا پہلے قومی، "عام") خالص ہینڈ رائٹنگ میں اظہار زبان - زبان مجرد میں تحلیل لیکن غیر کی طرح ایک تجرید میں تبدیل نہ -objective آرٹ. دیگر semiotic تہوں (مخالف کی نشانیوں میں سے رنگ یا ان کے پس منظر، یا خالص رنگ اور فارم کی جگہ) فنکارانہ نیت اور اس موضوع پر مصنف کے رویے کا اظہار کرنے کے صرف اضافی طریقے ہیں. یہ ریڑھ کی ہڈی اور دیگر عناصر کے لئے محور ہو جاتا ہے - اس صورت میں، یہ ایک ارتہین کام میں انسداد نشانی ایک روایتی بصری نظم میں لفظ / خط کے طور پر ایک ہی اہم کردار ادا کرتا ہے کہ کہنا سمجھدار ہے. تاہم، اینٹی سائن ان کریں (حقیقت میں اس کے "مخالف signness") کی نوعیت بصری شاعری سے ممتاز جس ارتہین تحریر کی وجہ سے مصنوعی فطرت، کے بارے میں مقالہ خارج کر. (ہم مکمل طور پر علیحدہ اور نئے ہونے کے بارے میں غور ہے) اس فنکارانہ سمت پر اس کا نام دیا ہے کہ اصطلاح ارتہینیا - تو موجودہ علامت کے نظام کے عناصر لانے، روایتی دو جزو (signifier، پرتیک) مخالف کی نشانیوں میں استعمال شامل نہیں ہے ارتہین تحریری، یا آرٹ ارتہین اس طرح کے عناصر کے ساتھ تجریدی کام منسوب میں ہمیں بنیادی طور پر غلط ہے. ارد لسانی "نشانیاں" کے ساتھ خاص جذباتی پیغامات (یا مصنف کی بیہوشی، یا اس کے ذریعے بات اجتماعی بے ہوشی) زبان کی ایک تصویر کی تشکیل اور ترسیل دونوں بصری شاعری سے ارتہین تحریر ممتاز، مؤخر الذکر بھی ایک معنی (ایک مجرد کے ساتھ بنیادی طور پر کام کر رہے ہیں ایک)، اور اس زبان کی ایک تصویر تخلیق کرتا ہے یہاں تک کہ اگر، کے طور پر اچھی طرح سے کے طور پر روایتی ادب سے، وغیرہ رنگ کے semiotics، کے ساتھ کام کرنے کے تجریدی آرٹ کی طرف سے، لیکن یہ تو ایک) لسانی (بنیادی طور پر مختلف ذرائع استعمال کرتے ہوئے ہے. ترکیب کے لئے کے طور پر، دیگر فنون کے ساتھ اختلاط کرنے کے لئے تحریری طور پر ارتہین ممکنہ عظیم اور (یہ کم از کم اب تک، ختم نہیں ہے) بھی لازوال ہے. کی وجہ سے اس کے مخالف signness کرنے، ارتہین تحریر بالکل پرجیوی-نظریے کے حامی مؤثر طریقے سے نازک سے، بہت سے سیاق و سباق میں، بدقسمتی سے، استعمال کیا جا سکتا. ارتہین فن میں ایک امیر سیاسی صلاحیت نہیں ہے. ایک ہاتھ پر، اس شے کے تبادلے کے اور جنگل میں دنیا سے "واپسی" کی پریکٹس بن کر سکتے ہیں؛ دوسری طرف یہ جابر لسانی گفتگو کی طرف سے آرڈر میں لایا کے نظام میں ایک اشتعال انگیز اور غیر مستحکم عنصر ہے. ہم واقعی ارتہین تحریری پیسہ بنانے یا ایک ارتہین آرٹسٹ جا رہا ہے "فیشن" ہو سکتا ہے صرف اس وجہ سے ایک سماجی حیثیت کے حاصل کرنے کا ایک طریقہ بن نہیں کرنا چاہتا. ہم ارتہین لکھنے کے لئے ان کے سروں تبدیل کر کوئی بھی موجود ہیں جہاں معنی ایجاد کرنے کے لئے فوری ہیں جو سائنسی postmodernism کے شیطانوں کو دیکھنے کے لئے نہیں کرنا چاہتا. ارتہین لکھنے کے مواد کی مدت، بے معنی ہے. یہ پرتیک اس لئے اس کے راستے بنانے کے لئے میں ناکام رہے کہ ایک signifier طور پر باطل ہے. اصل زبان کے ہاتھ ایک مختلف تقریر کے نام سے ہم خاموش ایک کرتا ہے جس میں ایک اوییکتیک متن، کے اندرونی میں پھیل کے طور پر لیکن یہ ایک اشارہ کے طور پر، ایک ایکٹ کے طور معنی نہیں ہے.

No comments:

Post a Comment